ملک میں بڑھتی ہوئی قتل وغارت اور ٹارگٹ کلنگ کے سد باب کیلئے فوری اقدامات کئے جائیں۔

 فیصل آباد ( )حکمران طبقہ آپس کی سیاسی محاذ آرائی میں ملک کی سلامتی کوداؤ پر نہ لگائے۔پاکستان کے ٹکڑے کرنے کی بجائے اس کی ترقی اور خوشحالی کی طرف بھرپور توجہ دے جائے ۔انفرادی یااجتماعی طور پر جولوگ ملک کی بہتری کیلئے کام کررہے ہیں ان پر تنقید کرنے کی بجائے ان کی خدمات کوخراج تحسین پیش کیاجائے۔ انتظامی بنیادوں پر صوبے بنائے جائیں نہ کہ لسانیات اور فرقہ واریت کی بنیاد پر کہ پاکستان کوتقسیم کیاجائے۔ ا سکے ساتھ یہ بھی ضروری ہے کہ پہلے سے موجود ہ سیٹ اپ کومضبوط اور فعال بنانا بھی وقت کی اہم ضرورت ہے ۔حکمران طبقہ ہوش کے ناخن لے اور ملک کوذاتی جاگیر سمجھ کرلوٹنے والے ’’یوم احتساب ‘‘کوبھی پیش نظر رکھے۔ان خیالات کااظہار چےئرمین لاثانی ویلفےئر فاؤنڈیشن صوفی مسعوداحمدصدیقی نے لاثانی سیکریٹریٹ پر فاؤنڈیشن کے مرکزی عہدیداران سے ’’موجودہ ملکی صورتحال ‘‘کے حوالے سے بات چیت کرتے ہوئے کیا۔انہوں نے مزید کہاکہ سیاسی جماعتیں مثبت سیاست کریں ایک دوسرے پر کیچڑ اچھالنے یالوٹ مار کرنیوالی سیاست سے پرہیز کرکے عوامی فلاحی منصوبوں کی طرف توجہ دی جائے۔کوئٹہ ،کراچی اورملک کے دیگر حصوں میں بڑھتی ہوئی قتل وغارت اور ٹارگٹ کلنگ کے سدباب کیلئے بھی فوری اقدامات کئے جائیں ۔