بڑھتے ہوئے فضائی اور زمینی حادثات سے بچاجاسکتاہے۔ صوفی مسعوداحمدصدیقی

 راولپنڈی کے علاقے حسین آباد میں پیش آنیوالے حادثے میں 127افراد کی ہلاکت قوم کیلئے لمحہ فکریہ ہے۔پیر لیاقت علی نقشبندی

ایسے واقعات جھوٹ ،بہتان ،رزق حرام سمیت انبیاء واولیاء کرام کی گستاخی کے سبب تیزی سے رونما ہورہے ہیں۔پیر عتیق الرحمن نقشبندی

سچے دل سے توبہ اور حضور نبی کریم ﷺ کی بارگاہ اقدس میں درودوسلام پیش کرناقدرتی آفات سے بچنے کاواحد ذریعہ ہے۔پیر صوفی عبدالمجید

فیصل آباد ( )بڑھتے ہوئے فضائی اور زمینی حادثات سے بچاجاسکتاہے،مارگلہ اور چارٹرڈ طیارے کے حادثات کے زخم ابھی تازہ تھے کہ راولپنڈی کے سانحے نے قوم کوایک اور گہرازخم لگادیا جس میں 127جانوں کاضیا ع ہوا۔عوام الناس کوایسے واقعات کے بارے میں میڈیا کے ذریعے اپریل 1997اوراگست 2005میں باطنی اطلاعات دی گئیں کہ عوام کی اکثریت جھوٹ ،بہتان ،رزق حرام سمیت انبیاء کرام،خلفائے راشدینؓ ،پنجتن پاک ،آل رسو ل اہلبیتؓ ،ازواج مطہراتؓ اور اولیاء اللہ کی گستاخی کے سبب قدرتی آفات کاتیزی سے نزول ہوچکاہے ،جس کاواحد حل یہ ہے کہ سچے دل سے توبہ کی جائے اور حضور نبی کریم رو ف الرحیم ﷺ کی بارگاہ اقدس میں درودوسلام کے نذرانے پیش کئے جائیں ۔ان خیالات کااظہار صوفی مسعوداحمدصدیقی امیر تنظیم مشائخ عظام پاکستان نے چکلالہ ائیرپورٹ (راولپنڈی)کے قریب میں پیش آنیوالے اندوہناک فضائی حادثے بارے تنظیم مشائخ عظام پاکستان کی مرکزی مجلس شوریٰ کے ہنگامی اجلاس میں کیا۔شرکاء اجلاس میں پیر سید احمد ندیم شاہ نقشبندی،صوفی نذیر حسین نقشبندی ،پیر صوفی عبدالمجید نقشبندی ، محمد ریحان خان نقشبندی،پیر طریقت محمد اصغر نقشبندی ،پیر لیاقت علی نقشبندی،پیر اعجاز احمدباباجی سرکار،پیر رانا محمد طاہر نقشبندی،پیر مشتاق احمد صدیقی،پیر عتیق الرحمن نقشبندی،افتخار اقبال نقشبندی،محمدناصر علی گل نقشبندی ،محمد احسان نقشبندی،نذیر حسین نقشبندی،محمد ارشاد نقشبندی،محمد طارق نقشبندی،اعجاز احمد نقشبندی،محمد حامد رضا نقشبندی،سید رضوان انوار جیلانی نقشبندی،رفاقت علی نقشبندی،پیر امجد مسعودنقشبندی ،غلام حیدر نقشبندی،ناصر عارف نقشبندی نے شرکت کی۔اجلاس کے اختتام پراللہ جل شانہ کی بارگاہ اقدس میں ملک وملت کی سلامتی ،ترقی ،خوشحالی اور بحرانوں سے نجات کیلئے خصوصی دعاکی گئی۔