�الج کے مریض اور مریض� کوش�ا عطا �وگئی

 Ø§Ú†Ú¾Ø±Û�( لاÛ�ور) میں محÙ�Ù„ ذکر Ùˆ نعت کا انعقاد کیا گیا تو حضرت لاثانی سرکار Ú©Ùˆ دعوت خاص دی گئی آپ Ù†Û’ کرم Ù�رمایا اور رضا مندی کا اظÛ�ار Ù�رمایا ۔محÙ�Ù„ کا دن Ø¢ Ù¾Û�نچا تو شاÛ�درÛ� والوں Ù†Û’ حضور لاثانی سرکار Ú©Ùˆ پنڈال تک لیجانے کیلئے ایک بگھی کا انتظام کیا Û” بگھی والا مقررÛ� وقت پر Ø¢ گیا اور سرکار صاحب محÙ�Ù„ میں جانے کیلئے باÛ�ر تشریÙ� Ù„Û’ آئے۔ باÛ�ر تشریÙ� لائے تو دیکھا Ú©Û� بÛ�ت سے مریدین Ùˆ عقیدتمند موجود آپ Ú©ÛŒ دید Ú©Û’ پیاسے Ú©Ú¾Ú‘Û’ Û�یں ۔ان میں سے Ú©Ú†Ú¾ اپنے مسائل عرض کرنا چاÛ�تے تھے۔ ایک لڑکا اپنے والد Ú©Ùˆ ( جو Ú©Û� Ù�الج Ú©Û’ مریض تھے ) Ù„Û’ کر Ø¢Ú¯Û’ بڑھا اور عرض Ú©ÛŒ! ’’حضور! میرے والد Ú©Ùˆ کئی سال سے Ù�الج کا مرض Û�Û’Û” آپ کرم Ù�رمائیں Ú©Û� ÛŒÛ� تندرست Û�Ùˆ جائیں۔‘‘ آپ Ù†Û’ اس Ú©Û’ جسم پر اپنا دستÙ� Ø´Ù�ا Ø¡ پھیرا پھر اس Ú©Û’ بازؤں پر چند مرتبÛ� Û�اتھ پھیرا اور Ù�رمایا Ú©Û� ’’بازو اوپر اٹھا ؤ۔‘‘ تو اس Ù†Û’ بڑے آرام سے اپنے دونوں بازو اوپر اٹھا لیے۔ جو برسوں سے Ù�الج زدÛ� اور بے جان تھے۔ ÙˆÛ�اں موجود تمام لوگ ÛŒÛ� دیکھ رÛ�Û’ تھے۔ ÛŒÛ� کرامت دیکھ کر حیران Û�Ùˆ گئے اور سبحان اللÛ�! سبحان اللÛ�! Ú©Û�Û� اْٹھے۔ پھر لوگوں Ù†Û’ Ú©Û�ا Ú©Û� ’’حضور اتنا ٹھیک کر دیا Û�Û’ تو اب اÙ�سے چلا بھی دیں۔‘‘ آپ Ù†Û’ اسکی ٹانگوں پر Û�اتھ پھیرا اورÙ�رمایا! ’’Ú†Ù„ Ú©Û’ دکھا ؤ۔‘‘ تو ÙˆÛ� چلنے بھی Ù„Ú¯ گیے۔ سبھی آپ Ú©ÛŒ اس کرامت سے بÛ�ت متاثر Û�وئے اور Ú©Û�Ù†Û’ Ù„Ú¯Û’! ’’واقعی!جیسا لاثانی Ù�یض Û�Û’ ،ایسا Ù�یض Ú©Û�یں Ù†Û�یں۔‘‘ بگھی والا ÛŒÛ� دیکھ کر بÛ�ت Û�ÛŒ متاثر Û�وا اور اگلے دن بھی جÛ�اں محÙ�Ù„ تھی ÙˆÛ�اں خود Û�ÛŒ بگھی Ù„Û’ کر Ù¾Û�Ù†Ú† گیا اورکرایÛ� بھی Ù†Û�یں لیا۔ پھر Ú©Û�Ù†Û’ لگا! ’’Ú©Ù„ تک مجھے آپ Ú©Û’ بارے میں پتÛ� Ù†Û�یں تھا جبکÛ� آج میں عقیدت محبت سے بگھی Ù„Û’ کر آیا Û�ÙˆÚºÛ”‘‘ اسکا گھوڑا بیمار تھا، Ú¯Ú¾ÙˆÚ‘Û’ Ú©ÛŒ ٹانگ پر کاÙ�ÛŒ بڑی گلٹی تھی۔ اس Ù†Û’ آپ سے توجÛ� کرنے کیلئے عرض Ú©ÛŒ تو آپ Ù†Û’ اس Ú©Û’ Ú¯Ú¾ÙˆÚ‘Û’ پر بھی نظر کرم Ù�رمائی اس کا گھوڑاٹھیک Û�Ùˆ گیا۔ اس محÙ�Ù„ (دوسری محÙ�Ù„ ) میں بھی اس Ù†Û’ آپکے کرم کا ایک انوکھا واقعÛ� دیکھا۔ ÙˆÛ� ÛŒÛ� Ú©Û� جب آپ محÙ�Ù„ میں تشریÙ� Ù„Û’ جانے Ù„Ú¯Û’ تو ÙˆÛ�اں بھی لوگ جوق در جوق آپ Ú©ÛŒ ایک جھلک دیکھنے کیلئے جمع تھے۔ ان میں مردو عورت شامل تھے۔ اندر زنان خانے میں عورتوں کا Û�جوم تھا تو باÛ�ر مردوں کا ایک جم غÙ�یر تھا۔ آپ Ú©Û’ سامنے ایک ایسی عورت لائی گئی جو Ú©Û� تین سال سے Ù�الج Ú©ÛŒ مریضÛ� تھی اور اسکی زبان پر بھی Ù�الج تھا۔ ÙˆÛ� بول بھی Ù†Û�یں سکتی تھی آپ Ù†Û’ اسے دَم Ù�رمایا اور توجÛ� Ù�رمانے Ú©Û’ بعد Ù�رمایا! ’’Ú©Û�Û� اللÛ� ۔۔۔اللÛ�‘‘ اس Ù†Û’ بولنے Ú©ÛŒ کوشش Ú©ÛŒ لیکن اس سے بولا Ù†Û�یں گیا۔ آپ Ú©ÛŒ Ú©ÛŒÙ�یت Ú©Ú†Ú¾ بدلی اور آپ Ù†Û’ اسی Ú©ÛŒÙ�یت میں Ù�رمایا! ’’Ú©Û�ندی کیوں نئیں Ú©Û�Û� اللÛ�Û”Û”Û” اللÛ� ‘‘ آپ کا یوں Ù�رمانا تھا Ú©Û� اسی زبان پر اسی لمحے اللÛ� اللÛ� کا ورد جاری Û�Ùˆ گیا پھر آپ Ù†Û’ Ù�رمایا! ’’Ú©Û�Û� لا الÛ� الا اللÛ� محمد رسول اللÛ� ï·º‘‘ اس Ù†Û’ بھی پورا کلمÛ� پڑھا۔ ÙˆÛ�اں جتنے لوگ موجود تھے سب Ú©Û’ سامنے ÛŒÛ� کرامت Û�وئی۔ ÙˆÛ�اں ایک شور سا Ù…Ú† گیا Ú©Û� گونگی عورت Ú©Ùˆ قوت گویائی مل گئی۔ ÙˆÛ� بولنے لگی۔ کمال Û�Ùˆ گیا۔ پیر لاثانی Ù†Û’ ایک منٹ میں تین برسوں کا Ù�الج کا مرض ٹھیک کردیاجسے تمام ڈاکٹرز مل کر تین سال میں بھی صحیح Ù†Û� کر سکے ۔اللÛ� تعالیٰ Ù†Û’ اپنے محبوب Ú©Û’ Û�اتھوں Ø´Ù�اء دی۔‘‘ بÛ�ت سے لوگ ÛŒÛ� دیکھ کر بیعت Û�ونے کیلئے ٹوٹ Ù¾Ú‘Û’Û” بگھی والا بھی Ú©Û�Ù†Û’ لگا! ’’سرکار مجھے بھی بیعت کر لیں۔‘‘ آپ Ù†Û’ ان سب Ú©Ùˆ سلسلÛ� میں داخل Ù�رمایا اور اللÛ� کا ذکر کروایا۔